اردو
Saturday 25th of March 2017
code: 81614
قصيدہ بردہ شريف کے خالق امام بوصيري رحمة اللہ عليہ

قصيدہ ء بردہ شريف (عربي:قصيدة البردة) ايک شاعرانہ کلام ہے جوکہ مصر کے معروف صوفي شاعر ابو عبد اللہ محمد ابن سعد البوصيري (1211ء-1294ء) نے تحرير فرمايا۔ آپ کي تحرير کردہ يہ شاعري پوري اسلامي دنيا ميں نہايت معروف ہے۔

امام بوصيري رحم? اللہ عليہ (1211ء-1294ء) پورا نام ابو عبد اللہ محمد ابن سعد البوصيري ايک مصري شاعر تھے جوکہ مصر ميں ہي رہے، جہاں اُنہوں نے ابنِ حناء کي سرپرستي ميں شاعرانہ کلام لکھے۔ اُن کي تمام تر شاعري کا مرکز و محور مذہب اور تصوف رہا۔

اُن کا سب سے مشہور شاعرانہ کلام قصيدہ بردہ شريف ہے جوکہ حضور پاک صلي اللہ عليہ و آلہ و سلم کي نعت، مدحت و ثناء خواني پر مبني ہے اور اسلامي دنيا ميں نہايت مشہور و مقبولِ عام ہے۔

 قصيدہء بردہ شريف کے لکھنے پر بھي ايک واقعہ ہے کہ اس قصيدے کو لکھنے سے پہلے، امام بوصيري کوڑھ کے مرض ميں مبتلا تھے۔ اسي عالم ميں آپ نے حالات سے پريشان ہوکر داد رسي کے لئے يہ قصيدہ تحرير فرمايا، اُسي شب امام بوصيري کو خواب ميں حضور پاک صلي اللہ عليہ و آلہ و سلم کي زيارت ہوئي اور آپ صلي اللہ عليہ و آلہ و سلم نے امام بوصيري کو اپني کملي عنايت فرمائي۔ دوسرے دن جب امام بوصيري بيدار ہوئے تو وہ کملي آپ کے جسم پر موجود تھي اور آپ مکمل طور پر صحتياب ہوچکے تھے۔

تصوف اور وليوں کے ماننے والے مسلمانوں نے شروع ہي سے اس کلام کو بے حد عزت و توقير دي۔ اس کلام کو حفظ کيا جاتا ہے اور مذہبي مجالس و محافل ميں پڑھا جاتا ہے اور اس کے اشعار عوامي شہرت کي حامل عمارتوں ميں مسجدوں ميں خوبصورت خطاطي ميں لکھے جاتے ہيں۔

کچھ مسلمانوں کا يہ بھي ماننا ہے کہ اگر قصيدہ بردہ شريف سچي محبت اور عقيدت کے ساتھ پڑھا جائے تو يہ بيماريوں سے بچاتا ہے اور دلوں کو پاک کرتا ہے? اب تک اس کلام کي نوے (90) سے زائد تشريحات تحرير کي جا چکي ہيں اور اس کے تراجم فارسي، اردو، ترکي، بربر، پنجابي، انگريزي، فرينچ، جرمني، سندھي و ديگر بہت سے زبانوں ميں کئے جا چکے ہيں۔

مولاي صلــــي وسلــــم دائمـــاً أبــــدا

علـــى حبيبــــك خيــر الخلق كلهـم

أمن تذكــــــر جيــــــرانٍ بذى ســــــلم

مزجت دمعا جَرَى من مقل بـــــدم

َمْ هبَّــــت الريـــــحُ مِنْ تلقاءِ كاظمــةٍ

وأَومض البرق في الظَّلْماءِ من ضم

فما لعينيك إن قلت اكْفُفاهمتـــــــــــــــا

وما لقلبك إن قلت استفق يـــــــــم

أيحسب الصب أن الحب منكتـــــــــــم

ما بين منسجم منه ومضطــــــــرم

لولا الهوى لم ترق دمعاً على طـــــللٍ

ولا أرقت لذكر البانِ والعلــــــــــمِ

فكيف تنكر حباً بعد ما شـــــــــــــدت

به عليك عدول الدمع والســـــــــقمِ

وأثبت الوجد خطَّيْ عبرةٍ وضــــــــنى

مثل البهار على خديك والعنــــــــم

نعم سرى طيف من أهوى فأرقنـــــــي

والحب يعترض اللذات بالألــــــــمِ

يا لائمي في الهوى العذري معـــــذرة

مني إليك ولو أنصفت لم تلــــــــــمِ

عدتك حالي لا سري بمســــــــــــــتتر

عن الوشاة ولا دائي بمنحســـــــــم

محضتني النصح لكن لست أســـــمعهُ

إن المحب عن العذال في صــــــممِ

إنى اتهمت نصيح الشيب في عـــــذلي

والشيب أبعد في نصح عن التهـــتـمِ


source : tebyan
user comment
 

latest article

  اہل بیت(ع) عالمی اسمبلی کی کاوشوں سے پرتگال کا اسلامی مرکز ...
  شوہر، بيوي کي ضرورتوں کو درک کرے
  بڑي بات ہے
  خدا کي تعريف
  بہار آئي
  رات
  تا روں بھري رات
  ملت اسلامیہ کے نوجوانوں کے لیے لمحہ فکر و عمل
  اسلام میں بچی کا مقام
  اولاد کی تربیت میں محبت کا کردار